اُس شوخ کا گو ہم پہ کرم بھی ہے ستم بھی – نظم

روزنامہ ’’الفضل‘‘ ربوہ 28؍جولائی 2010ء میں مکرم محمود الحسن صاحب کی غزل شائع ہوئی ہے۔ اس میں سے انتخاب پیش ہے:

اُس شوخ کا گو ہم پہ کرم بھی ہے ستم بھی
ہم اہلِ محبت کے لئے شہد ہے سم بھی
ہم اہل وفا ہیں اسی امید پہ قائم
وا ہو گا کبھی ہم پہ ترا بابِ کرم بھی
کچھ ہم بھی سنائیں تجھے روداد محبت
اے گردشِ دوراں ذرا کچھ دیر کو تھم بھی
مانا کہ تو ہے حسن میں یکتائے زمانہ
دیوانگی عشق میں مشہور ہیں ہم بھی
دنیا بھی بہت درپئے آزار ہے لیکن
کچھ کم تو نہیں ہم پہ ترا لطف وکرم بھی
اللہ کسی قوم پہ وہ وقت نہ لائے
سچ لکھنے سے معذور ہوں جب اہلِ قلم بھی

0
یہ مضمون شیئر کرنے کے لئے یہ چھوٹا لنک استعمال کریں۔ جزاک اللہ [https://khadimemasroor.uk/oiZig]

اپنا تبصرہ بھیجیں