یہ داستاں عجب ہے ، یہ صد سالہ داستاں – نظم

ماہنامہ ’’خا لد‘‘ ربوہ ستمبر 2008ء میں شامل اشاعت مکرم رشید احمد قیصرانی صاحب کی ایک نظم سے انتخاب پیش ہے:

یہ داستاں عجب ہے ، یہ صد سالہ داستاں
یہ خواب رت میں جاگتی آنکھوں کی داستاں
راہ طلب میں جھومتے جذبوں کی داستاں
پلکوں کی پینگھ جھولتے اشکوں کی داستاں
ان بارشوں میں بھیگتے سجدوں کی داستاں
یہ داستاں عجب ہے ، یہ صد سالہ داستاں
جو رہگزار قدرتِ اولیٰ نے کھول دی
اس لامکاں سے شہر طلب کے مکین تک
اس رہگزر پہ قدرتِ ثانی کے نامہ بر
پہنچے ہیں پا برہنہ کنارِ زمین تک

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں

ur اردو
X