محترم ثاقب زیروی صاحب کی یاد میں

روزنامہ ’’الفضل‘‘ ربوہ 18؍جولائی 2002ء میں محترم ثاقب زیروی صاحب کی وفات کے حوالہ سے شامل اشاعت جناب راغب مرادآبادی صاحب کی ایک نظم سے انتخاب ہدیۂ قارئین ہے:

شمعِ حبِّ احمدؐمرسل ہے دل میں ضَو فگن
بے نیازِ دولتِ دنیا ہیں ثاقب زیروی
جملہ اصناف سخن میں شعر گوئی کی مگر
نعت میں بھی مثل آپ اپنا ہیں ثاقب زیروی
حرفِ حق کہنے سے باز آجائیں ممکن ہی نہیں
نرغۂ اعداء میں گو تنہا ہیں ثاقب زیروی
نعت گوئی ہی کا اے راغبؔ یہ اِک اعجاز ہے
وارثِ فکرِ فلک پیما ہیں ثاقب زیروی

50% LikesVS
50% Dislikes
0

اپنا تبصرہ بھیجیں