گھات میں ہے صفِ دشمناں شہر میں – نظم

روزنامہ ’’الفضل‘‘ ربوہ 21؍اپریل 2006ء میں محترمہ صاحبزادی امۃالقدوس صاحبہ کے ایک ’’دو غزلہ‘‘ سے انتخاب ہدیۂ قارئین ہے:

گھات میں ہے صفِ دشمناں شہر میں
ہیں ہدف اس کا خرد و کلاں شہر میں
کیوں ہے لفظوں پہ قدغن لگائی گئی
چیختی ہیں یہ خاموشیاں شہر میں
اس کی رحمت کے صدقے کڑی دھوپ میں
میرے سر پہ ہے اک سائباں شہر میں
آج بھی دہر میں عافیت ہے کہیں
تو بس میرے دارالاماں شہر میں

50% LikesVS
50% Dislikes
0

اپنا تبصرہ بھیجیں