ہر زماں تک روشنی اور ہر مکاں تک روشنی – نظم

روزنامہ ’’الفضل‘‘ ربوہ 30؍ستمبر 2005ء میں شامل اشاعت مکرم طارق بشیر صاحب کی ایک نظم سے انتخاب ملاحظہ فرمائیں:

ہر زماں تک روشنی اور ہر مکاں تک روشنی
روشنی ہی روشنی کون و مکاں تک روشنی
آستاں کی رفعتوں سے آسماں تک روشنی
کہکشاں کی وسعتوں سے لامکاں تک روشنی
روشنی کی ضوفشانی دائرہ در دائرہ
دائروں کی وسعتوں کے درمیاں تک روشنی
چار سُو پھیلی ہیں اس کے نُور کی پرچھائیاں
پھر بھی کہتا ہے تو انساں، ہے کہاں تک روشنی

50% LikesVS
50% Dislikes
0

اپنا تبصرہ بھیجیں