اے حسن طلب ! اے آخرِ شب ! اے دیدۂ نم ! اے ابر ِ کرم !

ماہنامہ ’’تحریک جدید‘‘ ربوہ نومبر 2008ء میں محترم چودھری محمد علی صاحب مضطرؔکی ایک نظم شائع ہوئی ہے۔ اس نظم سے انتخاب ہدیۂ قارئین ہے:

اے حسن طلب ! اے آخرِ شب ! اے دیدۂ نم ! اے ابرِ کرم !
خاموش! کہ کچھ کہنا ہے گنہ ، ہشیار کہ چپ رہنا ہے ستم
اے حسن مہک! اے عشق بہک! اے شدّتِ غم کے جام!چھلک
اے چشم تحیر ! گل کو نہ تک ، بیدار نہ ہو جائے شبنم
فرقت کی تھکن سے چور بدن ، مجبور وطن سے دُور بدن
تو چاہے تو تھم اے تیز قدم ! جو نہ چاہے تو چل تیار ہیں ہم
مے خانہ ترا آباد رہے ، یہ بزم ہمیشہ شاد رہے
دو گھونٹ پلا دے مضطرؔ کو ، تجھے تیرے ہی جود و عطا کی قسم

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں

ur اردو
X