محترم مظفر حسن صاحب

روزنامہ ’’الفضل‘‘ ربوہ 16 مئی2012ء میں مکرمہ ص۔حسن صاحبہ نے اپنے والد محترم مظفر حسن صاحب کا ذکرخیر کیا ہے۔ آپ کے پڑدادا حضرت حاجی عبدالعظیم صاحبؓ نے احمدیت قبول کی تھی لیکن اُن کی اولاد میں سے کوئی بھی احمدی نہ ہوا۔
محترم مظفر حسن صاحب کے والد محمد مقبول صاحب چین میں کاروبار کرتے تھے اور لمبے عرصہ کے بعد چند ایّام کے لئے گھر آیا کرتے تھے۔ آپ 24مارچ 1920ء کو سیالکوٹ کے گاؤں کلاس والا میں پیدا ہوئے۔ آپ کُل تین بھائی اور دس بہنیں تھیں۔ آپ کی پیدائش کے وقت گاؤں میں چیچک کی وبا پھیلی ہوئی تھی جس نے آپ کو اور آپ کی والدہ کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا اور نتیجۃً آپ کا ایک کان اور ایک آنکھ ضائع ہوگئے۔
آپ کے بچپن میں ہی آپ کے والد اپنی فیملی کو چین لے گئے جہاں سے چند سال کے بعد ہانگ کانگ منتقل ہوگئے۔ آپ نے میٹرک وہیں سے کیا تو پھر یہ فیملی مستقل طور پر سیالکوٹ میں آبسی جہاں آپ نے مَرے کالج سے اعلیٰ نمبروں میں F.Sc کیا اور پھر انجینئرنگ کی تعلیم کے لئے دہلی چلے گئے۔ یہ اتفاق تھا کہ وہاں کرایہ کے جس مکان میں رہائش پذیر ہوئے، وہاں دیگر دوست احمدی تھے۔ اُن کی تبلیغ کے نتیجہ میں آپ نے 1943ء میں حضرت مصلح موعودؓ کے ہاتھ پر بیعت کرلی۔ والدین کو علم ہوا تو انہوں نے ناراض ہوکر قطع تعلق کرلیا اور خرچ دینا بند کردیا۔ اس لئے تیسرے سال میں آپ کو تعلیم ادھوری چھوڑکر مجبوراً ملازمت کرنی پڑی۔ لیکن تب بھی آپ اپنی تنخواہ کا نصف اپنی والدہ کو بھیجتے رہے۔
آپ کی شادی 1946ء میں رشتہ کے چچا کی بیٹی امۃاللہ صاحبہ سے ہوگئی۔ پاکستان بننے کے بعد آپ اپنی اہلیہ کے ہمراہ کراچی منتقل ہوگئے جہاں نیول ہیڈکوارٹر کے ایڈمنسٹریٹو سیکشن میں آپ کا تقرّر ہوا۔ اس دفتر میں دس گیارہ سال کام کیا لیکن رشوت نہ لینے کی وجہ سے ترقی نہ ہوسکی۔ آخر دلبرداشتہ ہو کر یہ ملازمت 1958ء میں چھوڑ دی اور کویت چلے گئے۔ وہاں ایک نجی تجارتی کمپنی میں قریباً چالیس سال تک ملازمت کی۔ اس دوران آپ کی اہلیہ اپنے بچوں کے ہمراہ ربوہ میں رہائش پذیر رہیں۔ لمبا عرصہ الگ الگ رہتے ہوئے دونوں نے اپنی ذمہ داریاں بڑی ہمت، صبر اور حوصلے سے بااحسن ادا کیں۔
محترم مظفر حسن صاحب حقوق اللہ اور حقوق العباد پوری جانفشانی اور توجہ سے ادا کرنے والے تھے۔ دورانِ ملازمت بھی ہر کام چھوڑ کر وقت پر نماز ادا کرتے۔ ریٹائرمنٹ کے بعد لاہور میں اپنا گھر بنایا تو پانچوں نمازیں مسجد میں ادا کرنے جاتے۔ تہجد کا بھی التزام کرتے اور لمبے لمبے سجدوں والے نوافل ادا کرتے۔ بہت دعا گو تھے۔ قرآن کریم کی باقاعدہ تلاوت کرتے اور تفسیر کا مطالعہ ساری زندگی جاری رہا۔ رمضان کے بعد شوّال کے روزے بھی باقاعدگی سے رکھتے۔ صدقہ و خیرات کا خاص اہتمام کرتے۔ چندے آغاز میں ہی ادا کردیتے۔ کویت میں لمبا عرصہ سیکرٹری مال کے فرائض انجام دیئے اور ہر ماہ سب سے پہلی رسید اپنے چندوں کی کاٹتے۔ ہر مالی تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے اور جلد ادائیگی کرتے۔ اللہ تعالیٰ نے حج اور عمرہ کرنے کی بھی سعادت عطا فرمائی۔ آپ اپنے خاندان میں اکیلے احمدی تھے لیکن مخالفت کے باوجود سلسلہ سے مضبوطی سے منسلک رہے۔ 1966ء میں وصیت کرلی اور حصّہ جائیداد کی تمام ادائیگی مکمل کر کے سرٹیفکیٹ اپنی زندگی میں ہی حاصل کرلیا۔
حقوق العباد میں مثالی نمونہ تھے۔ عقیدہ میں فرق کے باوجود اپنے والدین اور بھائی بہنوں کا ہر طرح سے خیال رکھا۔ والدین کو حج کروایا، بہنوں کی شادیاں کیں اور آخری دَم تک فرائض ادا کرتے رہے۔ وفاشعار شوہر تھے، بیوی کے تمام تر حقوق خوش دلی سے ادا کرتے تھے۔
اپنی اولاد سے بہت پیار کرتے اور دُور رہتے ہوئے بھی اُن کی تعلیم و تربیت کا خیال رکھا۔ ہر بچے سے فرداً فرداً خط و کتابت تھی، تعلیمی ریکارڈ پوچھتے اور آئندہ کے لئے ہدایات دیتے۔ سال میں ایک ماہ کی رخصت پر جب گھر آتے تو ذاتی دلچسپی لے کر پڑھاتے۔ بہترین کھلونے اور معلوماتی رسائل منگواکر دیتے۔ سب بچوں کو بہترین تعلیم دلوائی۔
آپ ہر ایک سے پُر خلوص محبت کرنے والے اور بے غرض کام آنے والے تھے۔ دُور و نزدیک کے تمام رشتہ داروں کی خیر خبر رکھتے اور بوقتِ ضرورت خاموشی سے مدد کرتے رہتے۔ کسی کی طرف سے زیادتی ہوتی تو بھی ناراضگی کے اظہار کی بجائے ایسا رویہ ہوتا کہ کچھ ہوا ہی نہیں۔ بلند حوصلہ اور قوت برداشت رکھنے والے تھے۔ دوستوں کے ساتھ بھی انتہائی محبت اور خلوص کا تعلق تھا۔
بہت دعاگو تھے۔ کسی کو تکلیف میں دیکھتے تو بے چین ہوکر اُس کے لئے دعا کرتے۔ دعا کے لئے کہنے والے بھول جاتے لیکن آپ تہجد میں باقاعدگی سے دعا جاری رکھتے۔ غرباء کا بہت خیال رکھتے۔ ان کی ضروریات پر نظر رکھتے اور مدد کر تے رہتے۔ عید کے موقع پر اُن کے گھروں میں جاکر تحائف دیتے۔ رمضان میں ہمسایوں کو افطاری بھجواتے اور عید پر اُن کو ملنے کے لئے بھی جاتے۔
آپ بہت مہمان نواز اور خاطر مدارات کرنے والے تھے۔ گھر میں کسی بھی حیثیت کا مہمان آتا تو بڑھ کر گلے لگاتے، حال احوال پوچھتے اور صحت و سلامتی کی دعا دیتے۔ مہمانوں کی تواضع کے لئے خود اٹھ کر اشیاء خورونوش لاکر پیش کرتے۔ جب دونوں کانوں کی سماعت سے محروم ہوگئے تب بھی مہمان کے اکرام میں ساتھ بیٹھے رہتے۔
امانت اور دیانت کا یہ عالم تھا کہ غیر ملکی کاروباری کمپنی میں ملازمت کے دوران مالک لاکھوں ڈالر کا کام آپ کے حوالے کردیتے تھے۔ اپنے بچوں کے علاوہ ملک سے باہر رہائش پذیر رشتہ داروں کے بنکوں کے حساب کتاب بھی سنبھالے ہوئے تھے۔ ہر ایک کی فائل مکمل ہوتی اور ہر ایک کو اس کے حساب کی کاپی بھجوا دیتے۔
اپنا کام خود کرنے کے عادی تھے۔ کبھی ملازمین یا بچوں سے کسی کام کے لئے نہیں کہا۔ دینی امور میں پیش پیش رہتے۔ کویت میں چالیس سال تک سیکرٹری مال رہے۔ لاہور میں اپنے محلہ کے گیسٹ ہاؤس کا تمام حساب کتاب ایک عرصہ تک سنبھالے رکھا۔
آپ میں قوت برداشت بہت تھی۔ اپنی کسی تکلیف یا بیماری کا احساس دوسروں کو نہ ہونے دیتے۔ 1997ء میں دل کا بائی پاس ہوا لیکن کسی قسم کی تکلیف یا پریشانی کا اظہار نہ کیا۔ شگفتہ مزاجی اور مزاح آپ کی شخصیت کا اہم عنصر تھا۔ ادب اور شاعری سے بھی لگاؤ تھا۔ خود بھی شعر کہتے تھے اور دوسروں سے سن کر بھی محظوظ ہوتے۔ الغرض محبت، خلوص، وفا، دعا اور عجزوانکسار کا مجموعہ تھے۔ اپنی وفات سے گیارہ سال پہلے اپنی اہلیہ کی وفات کا صدمہ بڑے صبر اور حوصلہ سے برداشت کیا۔
31جنوری 2007ء کو آپ کی وفات ہوئی۔

50% LikesVS
50% Dislikes
0

اپنا تبصرہ بھیجیں